اندراج کی تاریخ  2/8/2020
کل مشاہدات  85

وہابی جنایتکار فرقے کی تاریخ کے مطالعے سے یہ بات بخوبی روشن ہوتی ہے کہ آگے بڑھنے کے لیئے اس کے پاس ارتکاب جرم اور مسلمانوں کے اموال پر ڈاکہ ڈالنے کے سوا کوئی اور راستہ نہیں۔ یہ بات تاریخی کتابوں میں جو ان کی فکر کے بارے میں لکھی گئی ہیں، مشاہدہ کیا جا سکتا ہے جس طرح کتاب تاریخ عنوان المجد ابن بشر اور تاریخ ابن غنام، کی طرف رجوع کرنے سے یہ مسئلہ واضح ہوتا ہے۔ [1]  اس گروہ نے مسلمانوں (شیعہ اور سنی) کے حق میں جہاں تک ہو سکے جرم کیئے تاکہ بے گناہ مسلمانوں کو قتل کریں اور ان کے اموال پر ڈاکہ ڈالیں، جس طرح طائف، یمن، مکہ [2]کربلا [3] وغیرہ کی عوام پر انکی جنایتیں کسی سے پوشیدہ نہیں۔۔۔۔۔۔اور حال حاضر میں بھی کسی بھی مسلمان ملک میں مسلمانوں کے خلاف فتنہ وفسادپايا  جاتا  ہے وہاں یقینا وہابیت کا ہاتھ ہے۔ جیسا کہ سب پر واضح ہے کہ: تکفیری گروہوں کی ایجاد من جملہ القاعدہ اور داعش، وہابیت کی طرف سے اسلامی معاشرے کے خلاف ایک منصوبہ ہے۔ [4]

لیکن اس کے مقابلے میں، اس منحوس فرقے کے وجود میں آنے کے بعد سے لیکر آج تک اس نے کبھی بھی کفار اور عالمی استکبار کے خلاف کوئی قدم نہیں اٹھایا، بلکہ ان کے ساتھ معاہدے کرتا ہے اور  ان کے لیئے امن کی ضمانت دیتا ہے تاکہ ان کے زیر تسلط علاقوں میں وہ آزادی سے مسلمانوں کے خلاف اپنے اقدامات جاری رکھیں،[5]  بلکہ اس سے بڑھ کر،  ان مشرکین کے ساتھ مل کر رقص کرتے ہیں[6]اور ان کی برتھ ڈے (روز تولد) بھی مناتے ہیں [7]
اس فرقے کی اس منافقانہ عمل کو سامنے رکھتے ہوئے ہم اسے دشمنان اسلام کے دوست اور خطے کے مسلمانوں کا بدترین دشمن سمجھ سکتے ہیں، جس کا ہدف صرف اور صرف اسلام کو کمزور کرنا اور مسلمانوں کے درمیان تفرقہ پھیلانا ہے۔

رائٹر: علی اکبر لطفی
ترجمہ: مظاہر علی

  


[2] . ابن بشر، عثمان، عنوان المجد فی تاریخ النجد، تحقیق: آل الشیخ، عبدالله، ناشر: مطبوعات دارة ملک عبدالعزیز، چاپ چهارم1402، ج1، ص286

[3] . ابن بشر، عثمان، عنوان المجد فی تاریخ النجد، تحقیق: آل الشیخ، عبدالله، ناشر:مطبوعات دارة ملک عبدالعزیز، چاپ چهارم1402، ج1، ص257

[4]  ر. ک، ابن فرحان مالکی، حسن، جذور الداعش، ناشر: دار المحجة البیضاء، بیروت، چاپ اول14014ق

[5] . https://www.alarabiya.net/ar/aswaq/economy/2017/05/20

[6] . https://www.youtube.com/watch?v=gGP1EjSN72I

[7] . https://sifeeleslam.wordpress.com/                 

نام
نام خانوادگی
ایمیل ایڈریس
ٹیکسٹ